اے رونق بزم جہاں تم پر فدا ہوجائیں ہم

اے رونق بزم جہاں تم پر فدا ہوجائیں ہم
تم ہی تو ہو،جس کی ثناء مکتوب بر لوح و قلم
یا صاحب الجود و کرم ،تم ہی سے ہے میرا بھرم
تم ہی سے ہے آقا مرے،دل میں تڑ پ آنکھوں میں نم
یا رحمت اللعالمیں یا سرور دنیا و دیں
روز جزا تیرے سوا، کوئی نہیں پرسان غم
ہم بے عمل ،مجرم بھی ہیں ،مجبور بھی ،محتاج بھی
اک بار سوئے عاصیاں ،اے مہرباں ،چشم کرم
خیرات تیرے نور کی ،خورشید و ماہ و کہکشاں
صدقہ تری زلفوں کا ہے ،خوشبو ،صبا،موج ارم
کونین اک گوشے میں ہے دامان رحمت کے تری
مسند تری عرش بریں ،سایہ ترا ابر کرم
لاکھوں برس سے دیدہ روح الامیں کی روشنی
سدیوں سے گیسو کی قبا پہنے ہوئے سنگ حرم
سرمایہ اشک رواں ،سایہ کند بر عاصیاں
من زاں سبب ،درنیم شب،یا سیدی گر یہ کنم
اے باعث ایجاد کل،اے وجہ تخلیق جہاں
ہے سجدہ گاہ عاشقاں ،آقا ترے نقش قدم
اے زینت و زیب جہاں ،شرف بشر ،روح اذاں
تو ہے پناہ عاصیاں بخشش تری شان کرم
رنگینی قوس و قرح گرد کف پا ہے تری
ہے مخزن اسرار حق،تیر ی جبین محترم
ماہ عرب ماہ مبیں اے رحمت اللعالمین
بعد از خدا کوئی نہیں تیرے سوائے محترم
جب آبنائے نور میں غوطے لگاتا ہے ادیؔب
لاتاہے موتی مدح کے کرتا ہے پھر نعتیں رقم