اختر برج رفعت پہ لاکھوں سلام
آفتابِ رسالت پہ لاکھوں سلام
مجتبٰے شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام
مصطفٰے جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزم ہدایت پہ لاکھوں سلام

جس کی عظمت پہ صدقے وقارِحرم
جس کی زلفوں پہ قرباں بہارِحرم
نوشۂ بزمِ پروردگارِ حرم
شہریارِ ارم تاج دارِ حرم
نو بہارِ شفاعت پہ لاکھوں سلام

جس کے قدموں پہ سجدہ کریں جانور
مُنہ سے بولیں شجر دیں گواہی حجر
وہ ہیں محبوبِ ربّ مالکِ بحرو بر
صاحبِ رجعتِ شمس وشقُّ القمر
نائبِ دستِ قدرت پہ لاکھوں سلام

لا مکاں کی جبیں بہرِ سجدہ جُھکی
رِفعتِ منزلِ عرش اعلیٰ جُھکی
عظمتِ قبلۂ دینِ و دنیا جُھکی
جن کے سجدے کو محرابِ کعبہ جُھکی
اُن بھوؤ ں کی لطافت پہ لاکھوں سلام

جس کے جلوے زمانے میں چھانے لگے
جس کی ضَوء سے اندھیرے ٹھکانے لگے
جس سے ظلمت کرے نور پانے لگے
جس سے تاریک دل جگمگانے لگے
اُس چمک والی رنگت پہ لاکھوں سلام

پڑ گئی جس پہ محشر میں بخشا گیا
دیکھا جس سَمت ابرِ کرم چھا گیا
رُخ جدھر ہوگیا، زندگی پاگیا
جس طرف اُٹھ گئی دَم میں دَم آگیا
اُس نگاہِ عنایت پہ لاکھوں سلام

ڈوبا سورج کسی نے بھی پھیرا نہیں
کوئی مثلِ یداللہ دیکھا نہیں
جس کی طاقت کا کوئی ٹھکانہ نہیں
جس کو بارِ دو عالم کی پرواہ نہیں
ایسے بازو کی قوت پہ لاکھوں سلام

جب ہوا ضَو فِگن دین و دنیا کا چاند
آیا خَلوَت سے جَلوَت میں اَسْرٰی کا چاند
نِکلا جس وقتِ مَسعودِ، بطحا کا چاند
جس سہانی گھڑی چمکا طیبہ کا چاند
اس دل افروزِ ساعت پہ لاکھوں سلام

حق کے محرم اِمام التّقٰے وَانّقٰے
ذاتِ اکرم امام التّقٰے وَانّقٰے
قطبِ عالم التّقٰے وَانّقٰے
غوثِ اعظم التّقٰے وَانّقٰے
جلوۂ شانِ قدرت پہ لاکھوں سلام

مرشدی شاہ احمد رضا خاں رضا
فیضیابِ کمالات حسّاں رضا
ساتھ اختر بھی ہوں زمزمہ خواں رضا
جبکہ خدمت کے قدسی کہیں ہاں رضا
مصطفٰے جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

شاعر :علامہ اخترؔرضا خاں

Comments are off for this post

اے صبا لے جا مدینے کو پیام عرض کردے ان سے با صد احترام
اے مکینِ گنبدِ خضرا سلام اے شکیبِ ہر دل شیدا سلام

اب مدینے میں مجھے بُلوائیے اپنے بیکس پر کرم فرمائیے
بُلبلِ بے پر پہ ہو جائے کرم اشیانش دِہ بگلزار حرم

ہند کا جنگل مجھے بھاتا نہیں بس گئی آنکھوں میں طیبہ کی زمیں
زندگی کے ہیں مدینے میں مزے عیش جو چاہے مدینے کو چلے

ہے مدینے چشمۂ آبِ حیات زندگی کو ہے مدینے میں ثبات
خلد کی خاطر مدینہ چھوڑدوں اِیں خیال است ومحال است وجنوں

خُلد کے طالب سے کہدو بے گماں طالب طیبہ کی طالب ہے جناں
مجھ سے پہلے میرا دل حاضر ہوا ارضِ طیبہ کس قدر ہے دِلرُبا

کتنی پیاری مدینے کی چمک روشنی ہی روشنی ہے تافلک
کتنی بھینی ہے مدینے کی مہک بس گئی بوئے مدینہ عرش تک

یا رسول اللہ از رحمت نگر در بقیع پاک خواہم مُستقر
بس انوکھی ہے مدینے کی بہار رشکِ صد گل ہیں اسی گلشن کے خار

کتنی روشن ہے یہاں ہر ایک شب ہر طرف ہے تابشِ ماہِ عرب
کیا مدینے کو ضرورت چاند کی ماہِ طیبہ کی ہے ہر سو چاندنی

نور والے صاحب معراج ہیں مہر و ماہ ان کے سبھی محتاج ہیں
اے خوشابختِ رسائے اخترت باز آور دِی گدارا بردرت

شاعر :علامہ اخترؔرضا خاں

Comments are off for this post

چراغاں چراغاں پیام ِمحمد ﷺ
بہت مستند ہے کلامِ محمد ﷺ

امیر و گدا میں نہیں فرق کوئی
زمانے میں یکساں نظام ِمحمد ﷺ

عدالت، شجاعت، سخاوت ،وفا میں
شہنشاہ ِ دوراں غلامِ محمد ﷺ

ازل سے لٹاتا ہوا پھول غنچے
ابد تک ہے گردش میں جام محمد ﷺ

شفیعِ امم بھی ، وہ ختم الرسل بھی
بہت ارفع اعلیٰ مقام محمدﷺ

مدینہ بھی ہے مستقر اُن کا اخؔتر
مکاں لامکاں بھی قیامِ محمدﷺ

شاعر :علامہ اخترؔرضا خاں

Comments are off for this post