دردِ دل کر مجھے عطا یارب

دردِ دل کر مجھے عطا یا رب
دے مرے درد کی دوا یا رب

لاج رکھ لے گنہگاروں کی
نام رحمٰن ہے ترا یا رب

عیب میرے نہ کھول محشر میں
نام ستار ہے ترا یا رب

بے سبب بخش دے نہ پوچھ عمل
نام غفار ہے ترا یا رب

آسرا ہم گنہگاروں کا
اور مضبوط ہو گیا یا رب

تو نے دی مجھ کو نعمتِ اسلام
پھر جماعت میں لے لیا یا رب

اہلِ سنّت کی ہر جماعت پر
ہر جگہ ہو تری عطا یا رب

تو حسن کو اٹھا حسن کر کے
ہو مع الخیر خاتمہ یا رب

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو
اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو
لا موجود الا اللہ لا مشہود الا اللہ
لا مقصود الا اللہ لا معبود الا اللہ
اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو
اللہ واحد ویکتا ہے ایک خدا بس تنہا ہے
کوئی نہ اس کا ہمتا ہے ایک ہی سب کی سنتا ہے
اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو

جز میں وہ ہے کل میں وہ رنگ و بوئے گل میں وہ
افغان بلبل میں وہ نغمات قُل قُل میں وہ
اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو

بلبل طوطی پروانہ ہر ایک اس کا دیوانہ
قمری اس کا مستانہ مور چکور کا جانہ نہ
اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو اللہ ہو

مولا دل کا زنگ چھڑا قلب نوری پائے جلا
دل کو کردے آئینہ جس میں چمکے یہ کلمہ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

اللہ اللہ اللہ اللہ
قلب کو اس کی روئیت کی ہے آرزو
جس کا جلوہ ہے عالم میں ہر چار سو
بلکہ خود نفس میں ہے وہ سُبحٰنہٗ
اللہ اللہ اللہ اللہ

عرش و فرش و زمان و جہت اے خدا
جس طرف دیکھتا ہوں ہے جلوہ تیرا
ذرّے ذرّے کی آنکھوں میں تو ہی ضیاء
قطرے قطرے کی تو ہی تو ہے آبرو
اللہ اللہ اللہ اللہ

تو کسی جا نہیں اور ہر جا ہے تو
تو منزّہ مکاں سے مبّرہ زسو
علم وقدرت سے ہر جا ہے تو کوُبکوُ
تیرے جلوے ہیں ہر ہر جگہ اے عفو
اللہ اللہ اللہ اللہ

سارے عالم کو ہے تیری ہی جستجو
جن وانس و ملک کو تری آرزو
یاد میں تیری ہر ایک ہے سُو بسو
بن میں وحشی لگاتے ہیں ضرباتِ ہُو
اللہ اللہ اللہ اللہ

نغمہ سنجانِ گلشن میں چرچا ترا
گیت تیرے ہی گاتے ہیں وہ خوش گلو
کوئی کہتا ہے حق کوئی کہتا ہے ھو
اور سب کہتے ہیں لا شریک لہٗ
اللہ اللہ اللہ اللہ

بُلبلِ خوش نوا طوطیٔ خوش گلو
زمزمہ خواں ہیں گاتے ہیں نغمات ھو
قمریٔ خوش لقا بولی حق سِرَّ ہٗ
فاختہ خوش ادا نے کہا دوست تو
اللہ اللہ اللہ اللہ

عفو فرما خطائیں مری اے عفو
شوق و توفیق نیکی کا دے مجھ کو تو
جاری دل کر کہ ہر دم رہے ذکر ہو
عادتِ بد بدل اور کر نیک خو
اللہ اللہ اللہ اللہ

خوابِ نوری میں آئیں جو نورِ خدا
بقعۂ نور ہو اپنا ظلمت کدا
جگمگا اٹھے دل چہرہ ہو پُر ضیاء
نوریوں کی طرح شغل ہو ذکر ہوٗ
اللہ اللہ اللہ اللہ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

معاف فضل و کرم سے ہو ہر خطا یا ربّ
ہو مغفِرت پئے سلطانِ اَنبیا یا ربّ

بِلا حساب ہو جنّت میں داخلہ یا ربّ
پڑوس خُلد میں سرور کا ہو عطا یا ربّ

نبی کا صدقہ سدا کے لیے تُو راضی ہو
کبھی بھی ہونا نہ ناراض یا خدا یا ربّ

ترے حبیب اگر مُسکراتے آجائیں
تو بالیقین اُٹھے قبر جگمگا یا ربّ

خَزاں پھٹک نہ سکے پاس، دے بہار ایسی
رہے حیات کا گلشن ہرا بھرا یا ربّ!

ہمارے دل سے نکل جائے الفتِ دنیا
پئے رضا ہو عطا عشقِ مصطَفٰے یا ربّ

نبی کی دید ہماری ہے عید یا اللہ
عطا ہو خواب میں دیدارِ مصطفٰے یا ربّ!

تُلیں نہ حَشر میں عطّار کے عمل مولیٰ
بِلا حساب ہی تُو اس کو بخشا یا ربّ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

ہمارے دل سے زمانے کے غم مِٹا یا ربّ
ہو میٹھے میٹھے مدینے کا غم عطا یا ربّ

غمِ حیات ابھی راحتوں میں ڈھل جائیں
تِری عطا کا اشارہ جو ہو گیا یا ربّ

پئے حُسین و حَسن فاطمہ علی حیدر
ہمارے بگڑے ہوئے کام دے بنا یا ربّ

ہماری بگڑی ہوئی عادتیں نکل جائیں
ملے گناہوں کے اَمراض سے شِفا یا ربّ

مجھے دے خود کو بھی اور ساری دنیا والوں کو
سُدھارنے کی تڑپ اور حوصَلہ یا ربّ

ہمیشہ ہاتھ بھلائی کے واسِطے اٹھیں
بچانا ظلم و ستم سے مجھے سدا یا ربّ

رہیں بھلائی کی راہوں میں گامزن ہر دم
کریں نہ رخ مِرے پاؤں گناہ کا یا ربّ

گنہگار طلبگار عَفو و رَحمت ہے
عذاب سَہنے کا کس میں ہے حوصلہ یا ربّ

عطا ہو “نیکی کی دعوت” کا خوب جذبہ کہ
دوں دھوم سنّتِ مَحبوب کی مچا یاربّ

عطا ہو ہمیں قبولِ عام
اور شُرور و فِتن سے سدا بچا یا ربّ

میں پُل صراط بِلا خوف پار کر لوں گا
تِرے کرم کا سہارا جو مل گیا یا ربّ

کہیں کا آہ! گناہوں نے اب نہیں چھوڑا
عذابِ نار سے عطّار کو بچا یا ربّ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

شرف دے حج کا مجھے بَہرِ مصطفٰے یا ربّ
روانہ سُوئے مدینہ ہو قافِلہ یا ربّ

دکھا دے ایک جھلک سبز سبز گُنبد کی
بس اُن کے جلووں میں آجائے پھر قضا یا ربّ

مدینے جائیں پھر آئیں دوبارہ پھر جائیں
اِسی میں عمر گزر جائے یا خدا یا ربّ

مِرا ہو گنبدِ خَضرا کی ٹھنڈی چھاؤں میں
رسولِ پاک کے قدموں میں خاتِمہ یا ربّ

وَقتِ نَزع سلامت رہے مِرا ایماں
مجھے نصیب ہو توبہ ہے التجا یا ربّ

جو “دیں کاکام” کریں دل لگا کے یا اللہ
اُنہیں ہو خواب میں دیدارِ مصطفٰے یا ربّ

تِری محبّت اُتر جائے میری نَس میں
پئے رضا ہو عطا عِشقِ مصطفٰے یا ربّ

زمانے بھر میں مچادیں گے دھوم سنّت کی
اگر کرم نے ترے ساتھ دید یا یاربّ

نَماز و روزہ و حَج و زکٰوۃ کی توفیق
عطا ہو اُمّتِ مَحبوب کو سدا یا ربّ

جواب قبر میں مُنکر نکیر کو دوں گا
ترے کرم سے اگر حوصَلہ ملا یا ربّ

بروزِ حَشر چھلکتا سا جام کوثر کا
بدستِ ساقیِٔ کوثر ہمیں پلا یا ربّ

بقیعِ پاک میں عطّار دَفن ہو جائے
برائے غوث و رضا از پئے ضِیا یا ربّ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

مٹا دے ساری خطائیں مِری مٹا یا ربّ بنادے نیک بنا نیک دے بنا یا ربّ
بنا دے مجھ کو الٰہی خُلوص کا پیکر قریب آئے نہ میرے کبھی ریا یا ربّ
اندھیری قبر کا دل سے نہیں نکلتا ڈر کروں گا کیا جو تُو ناراض ہو گیا یا ربّ
گناہگار ہوں میں لائقِ جہنّم ہوں کرم سے بخش دے مجھ کو نہ دے سزا یا ربّ
بُرائیوں پہ پَشَیماں ہوں رَحم فرمادے ہے تیرے قَہر پہ حاوی تری عطا یا ربّ
مُحیط دل پہ ہوا ہائے نفسِ اَمّارہ دِماغ پر مِرے ابلیس چھا گیا یا ربّ
رِہائی مجھ کو ملے کاش! نفس و شیطان سے تِرے حبیب کا دیتاہوں واسِطہ یا ربّ
گناہ بے عَدد اور جُرم بھی ہیں لا تعداد کر عَفو سہ نہ سکوں گا کوئی سزا یا ربّ
میں کر کے توبہ پلٹ کر گناہ کرتا ہوں حقیقی توبہ کا کردے شرف عطا یاربّ سنوں نہ فُحش کلامی نہ غیبت و چغلی تِری پسند کی باتیں فَقط سنا یا ربّ
کریں نہ تنگ خیالاتِ بدکبھی، کردے شُعُور و فکر کو پاکیزگی عطا یا ربّ
نہیں ہے نامۂ عطّار میں کوئی نیکی
فَقط ہے تیری ہی رحمت کا آسرا یا ربّ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

کب گناہوں سے کَنارا میں کروں گا یا ربّ!
نیک کب اے مِرے اللہ! بنوں گا یا ربّ!

کب گناہوں کے مرض سے میں شِفا پاؤں گا
کب میں بیمار، مدینے کا بنوں گا یا ربّ!

گر ترے پیارے کا جلوہ نہ رہا پیشِ نظر
سختیاں نزع کی کیوں کر میں سہوں گا یا رب!

نَزع کے وقت مجھے جلوۂ محبوب دکھا
تیرا کیا جائے گا میں شاد مروں گا یاربّ

قبر میں گر نہ محمد کے نظّارے ہوں گے
حشر تک کیسے میں پھر تنہا رہوں گا یا ربّ!

ڈنگ مچھر کا بھی مجھے سے تو سہا جاتا نہیں
قبر میں بچّھو کے ڈنگ کیسے سہوں گا یا ربّ!

گُھپ اندھیرا ہی کیا وَحشت کا بسیرا ہوگا
قبر میں کیسے اکیلا میں رہوں گا یا ربّ!

گر کفن پھاڑ کے سانپوں نے جمایا قبضہ
ہائے بربادی! کہاں جاکے چھپوں گا یاربّ!

ہائے معمولی سی گرمی بھی سہی جاتی نہیں
گرمی حَشر میں پھر کیسے سہوں گا یا ربّ!

اِذن سے تیرے سَرِ حشر کہیں کاش! حُضُور
ساتھ عطّار کو جنّت میں رکھوں گا یا ربّ!

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

حُبّ دُنیا سے تُو بچا یا ربّ عاشقِ مُصطَفٰے بنا یا ربّ
کر دے حج کا شرف عطا یا ربّ سبز گُنبد بھی دے دکھا یا ربّ
یہ تری ہی تو ہے عنایت کہ مجھ کو مکّے بلا لیا یاربّ
آج ہے رُو برو مِرے کعبہ سلسلہ ہے طواف کا یا ربّ
ابر برسا دے نور کا کہ لوں بارشِ نور میں نہا یا ربّ
کاش لب پر مِرے رہے جاری ذِکر آٹھوں پَہر ترا یا ربّ
چشم تَر اور قلب مُضطر دے اپنی اُلفت کی مے پِلا یا ربّ
آہ! طُغیانیاں گناہوں کی پار نیّا مِری لگا یا ربّ
نفس و شیطان ہو گئے غالب ان کے چُنگل سے تُو چُھڑا یا ربّ
کر کے توبہ میں پھر گناہوں میں ہو ہی جاتاہوں مُبتلا یا ربّ
نِیم جاں کر دیا گناہوں نے مرضِ عصیاں سے دے شِفا یا ربّ
کس کے در پر جاؤں گا مولا گرتُو ناراض ہو گیا یا ربّ
وقتِ رحلت اب آگیا مولیٰ جلوۂ مصطفٰے دکھا یا ربّ
قبر میں آہ! گُھپ اندھیرا ہے روشنی ہو پئے رضا یا ربّ
سانپ لپٹیں نہ میرے لاش سے قبر میں کچھ نہ دے سزا یاربّ
نورِ احمد سے قبر روشن ہو وحشت قبر سے بچا یا ربّ
کردے جنّت میں تُو جوار اُن کا
اپنے عطار کو عطا یاربّ

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

عمل کا ہو جذبہ عطا یا الٰہی
گُناہوں سے مجھ کو بچا یا الٰہی
میں پانچوں نَمازیں پڑھوں با جماعت
ہو توفیق ایسی عطا یا الٰہی

میں پڑھتا رہوں سنّتیں، وَقت ہی پر
ہوں سارے نوافِل ادا یا الٰہی

دے شوقِ تلاوت دے ذَوقِ عبادت
رہوں باوُضو میں سدا یا الٰہی

ہمیشہ نگاہوں کو اپنی جھکا کر
کروں خاشِعانہ دُعا یا الٰہی

نہ “نیکی کی دعوت” میں سُستی ہو مجھ سے
بنا شائقِ قافِلہ یا الٰہی

سعادت ملے درسِ “فیضانِ سُنّت”
کی روزانہ دو مرتبہ یا الٰہی

میں مِٹّی کے سادہ برتن میں کھاؤں
چٹائی کا ہو بسترا یا الٰہی

ہے عالِم کی خدمت یقینًا سعادت
ہو توفیق اِس کی عطا یا الٰہی

“صدائے مدینہ” دوں روزانہ صَدقہ
ابو بکر و فاروق کا یا الٰہی

میں نیچی نگاہیں رکھوں کاش اکثر
عطا کر دے شَرم و حیا یا الٰہی

ہمیشہ کروں کاش پردے میں پردہ
تُو پیکر حیا کا بنا یا الٰہی

لباس سُنّتوں سے ہو آراستہ اور
عِمامہ ہو سر پر سجا یا الٰہی

سبھی مُشت داڑھی و گَیسو سجائیں
بنیں عاشقِ مصطفٰے یا الٰہی

ہر اِک انعام کاش! پاؤں
کرم کرپئے مصطَفٰے یا الٰہی

ہو اخلاق اچّھا ہو کردار سُتھرا
مجھے متقی تو بنا یا الٰہی

غصیلے مِزاج اور تمسخر کی خَصلت
سے عطار کو تُو بچا یا الٰہی

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

مٹا میرے رنج و اَلم یا الٰہی عطا کر مجھے اپنا غم یا الٰہی
شرابِ مَحبّت کچھ ایسی پلادے کبھی بھی نشہ ہونہ کم یا الٰہی
مجھے اپنا عاشِق بنا کر بنادے تُو سرتاپا تصویرِ غم یا الٰہی
فقط تیرا طالب ہوں ہر گز نہیں ہوں طلبگارِ جاہ و حشم یا الٰہی
جو عشقِ محمد میں آنسو بہائے عطا کر دے وہ حشمِ نَم یا الٰہی
شَرف حج کا دیدے چلے قافِلہ پھر مِرا کاش ! سُوئے حرم یا الٰہی
دکھا دے مدینے کی گلیاں دکھادے دکھا دے نبی کا حرم یا الٰہی
چلے جان اِس شان سے کاش یہ سر درِ مصطفٰے پہ ہو خَم یا الٰہی
مِرا سبز گُنبد کے سائے میں نکلے محمد کے قدموں میں دم یا الٰہی
عبادت میں لگتا نہیں دل ہمارا ہیں عِصیاں میں بدمست ہم یا الٰہی
مجھے دیدے ایمان پر استقامت پئے سیِّدِ محتشم یا الٰہی
مِرے سر پہ عِصیاں کا بار آہ مولٰی ! بڑھا جاتا ہے دم بدم یا الٰہی
زمیں بوجھ سے میرے پھٹتی نہیں ہے یہ تیرا ہی تو ہے کرم یا الٰہی
مجھے نارِ دوزخ سے ڈر لگ رہا ہے ہو مجھ ناتُواں پر کرم یا الٰہی
سدا کے لیے ہو جا راضی خدایا ہمیشہ ہو لُطف و کرم یا الٰہی
تو عطّار کو بے سبب بخش مولیٰ
کرم کر کرم کر کرم یا الٰہی

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

میں مکّے میں پھر آ گیا یا الٰہی کرم کا ترے شکریہ یا الٰہی
نہ کر رد کوئی التجا یا الٰہی ہو مقبول ہر اِک دُعا یا الٰہی
رہے ذکر آٹھوں پہر میرے لب پر تِرا یا الٰہی تِرا یا الٰہی
مِری زندگی بس تری بندگی میں ہی اے کاش گزرے سدا یا الٰہی
نہ ہوں اشک برباد دنیا کے غم میں محمد کے غم میں رُلا یا الٰہی
عطا کردے اِخلاص کی مجھ کو نعمت نہ نزدیک آئے رِیا یا الٰہی
مجھے اولیا کی محبّت عطا کر تُو دیوانہ کر غوث کا یا الٰہی
میں یادِ نبی میں رہوں گُم رہوں ہمیشہ مجھے اُن کے غم گُھلا یا الٰہی
مِرے بال بچّوں پہ سارے قبیلے پہ رَحمت ہو تیری سدا یا الٰہی
دے دیوانوں کو بلکہ سبھی کو مدینے کا غم یا خدا یا الٰہی
خدایا اجل آکے سر پر کھڑی ہے دِکھا جلوۂ مصطفٰے یا الٰہی
مِری لاش سے سانپ بچھو نہ لپٹیں کرم بَہرِ احمد رضا یا الٰہی
تو عطار کر سبز گُنبد کے سائے
میں کردے شہادت عطا یا الٰہی

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

تُو نے مجھ کو حج پہ بُلایا یا اللہ میری جھولی بھردے
گِرد کعبہ خوب پھرایا یا اللہ مِری جھولی بھر دے
میدانِ عرفات دکھا یا یا اللہ مِری جھولی بھر دے
بخش دے ہر حاجی کو خدایا یا اللہ مِری جھولی بھر دے
بہرِ کوثرو بِیرِ زم زم کردے کرم اے ربّ اکرم
حشر کی پیاس سے مجھ کو بچانا یا اللہ مِری جھولی بھر دے
مولیٰ مجھ کو نیک بنادے اپنی الفت دل میں بسا دے
بہرِ صفا اور بہرِ مروہ یا اللہ مِری جھولی بھر دے
یا اللہ یا رحمٰن یا حنّان یا منّانُ
بخش دے بخشے ہوؤں کا صدقہ یا اللہ مِری جھولی بھر دے
واسطہ نبیوں کے سَرور کا واسِطہ صِدّیق اور عُمر کا
واسِطہ عثمان و حیدر کا یا اللہ مِری جھولی بھر دے
نارِ جہنّم سے تُو بچانا خُلدِ بریں میں مجھ کو بسانا
یاربّ اَز پئے ابو حنیفہ یا اللہ مِری جھولی
سائل ہوں میں تیری وِلا کا پھیر دے رُخ ہر رنج وبلا کا
واسطہ شاہِ کرب و بلا کا
جنّت میں آقا کا پڑوسی
بن جائے عطّار الٰہی
بَہرِ رضا و قُطبِ مدینہ
یا اللہ مِری جھولی بھردے

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

یا رب پھر اوج پر یہ ہمارا نصیب ہو
سوئے مدینہ پھر ہمیں جانا نصیب ہو

مکہ بھی ہو نصیب مدینہ نصیب ہو
دشتِ عرب نصیب ہو صحرا نصیب ہو

حج کا سفر پھر اے مرے آقا ﷺ نصیب ہو
عرفات کا منٰی کا نظارا نصیب ہو

اللہ ! دید گنبد خضرا نصیب ہو
یار ب ! رسول ﷺپاک کا جلوہ نصیب ہو

چوموں عرب کی وادیاں اے کاش جا کے پھر
صحرا میں اُن ﷺ کے گھومنا پھرنا نصیب ہو

کعبے کے جلوؤں سے دل مضطر ہو شاد پھر
لطفِ طوافِ خانہ کعبہ نصیب ہو

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

یارب محمد ﷺ! میری تقدیر جگا دے
صحرائے مدینہ مجھے آنکھوں سے دکھا دے

پیچھا مرا دُنیا کی محبت سے چھڑادے
یا رب ! مجھے دیوانہ مدینے کا بنا دے

روتا ہوا جس دم میں درِ یار پہ پہنچوں
اُس وقت مجھے جلوۂ محبوب دِکھادے

دل عشقِ محمد ﷺ میں تڑپتا رہے ہر دم
سینے کو مدینہ میرے اللہ بنا دے

بہتی رہے ہر وقت جو سرکارﷺکے غم میں
روتی ہوئی وہ آنکھ مجھے میرے خدا دے

ایمان پہ دے موت مدینے کی گلی میں
مدفن مرا محبوب ﷺکے قدموں میں بنا دے

ہو بہرِ ضیاء نظر کرم سوئے گنہگار
جنت میں پڑوسی مجھے آقا ﷺکا بنادے

دیتا ہوں تجھے واسطہ میں پیارے نبی ﷺکا
اُمت کو خدایا رَہِ سنت پہ چلادے

عطار سے محبوب ﷺکی سنت کی لے خدمت
ڈنکا یہ ترے دین کا دُنیا میں بجادے

اللہ !ملے حج کی اسی سال سعادت
عطار کو پھر روضۂ محبوب ﷺ دکھادے

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

ہر خطا تو در گزر کر بیکس و مجبور کی
یا الٰہی ! مغفرت کر بیکس و مجبور کی

یا الٰہی ! کر دے پوری از پئے غوث و رضا رحمۃ اللہ علیہما
آرزوئے دید سرور بیکس و مجبور کی

زندگی اور موت کی ہے یا الٰہی کشمکش
جاں چلے تیری رضا پر بیکس و مجبور کی

اعلیٰ علیین میں یا رب ! اسے دینا جگہ
رُوح چلدے جب نکل کر بیکس و مجبور کی

یا خدا پوری تمنا ہو بقیع پاک کی
از پئے حسنین و حیدر بیکس و مجبور کی

واسطہ نور محمد ﷺ کا تجھے پیارے خدا !
گورِ تیرہ کر منور بیکس و مجبور کی

آپ ﷺ کے میٹھے مدینے میں پئے غوث و رضا
حاضری ہو یا نبی ﷺ! ہر بیکس و مجبور کی

آمنہ رضی اللہ عنہا کے لال! صدقہ فاطمہ رضی اللہ عنہا لال کا
دورساری آفتیں کر بیکس و مجبور کی

نفس و شیطانِ غالب آئے لو خبر اب جلد تر
یا رسول اللہ ﷺ! آکر بیکس و مجبور کی

جس کسی نے بھی دعاء کیواسطے یا رب !کہا
کر دے پوری آرزو ہر بیکس و مجبور کی

بہر شاہ کربلا ہو دور آقاﷺ ہر بلا
اے حبیب ﷺ ربِ داور! بیکس و مجبور کی

آپ ﷺ خود تشریف لائے اپنے بیکس کی طرف
“آہ” جب نکلی تڑپ کر بیکس و مجبور کی

اے مدینے کے مسافر ! تو کہانی درد کی
اُن سے کہنا خوب رو کر بیکس و مجبور کی

حال بگڑا ! رُوح تڑپی جب مدینہ چھپ گیا
جان تھی غمگین و مضطر بیکس و مجبور کی

آپ کے قدموں میں گر کر موت کی یاد مصطفٰے ﷺ
آرزو کب آئیگی بر؟ بیکس و مجبور کی

نامہ عطار میں حسن عمل کوئی نہیں
لاج رکھنا روزِ محشر بیکس و مجبور کی

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

اۓ مدینے کے تاجدار تجھے اہل ایمان سلام کہتے ہیں
تیرے عشاق تیرے دیوانے، جانِ جاناں سلام کہتے ہیں
تیری فرقت میں بے قرار ہیں جو ہجر طیبہ سے دل فگار ہیں
وہ طلب گارِ دیدار رو رو کر اے میری جان سلام کہتے ہیں
جن کو دُنیا کے غم ستاتے ہیں ٹھوکریں دربدر جو کھاتے ہیں
غم نصیبوں کے چارہ گر تم کو وہ پریشان سلام کہتے ہیں
عشق سرور میں جو تڑپتے ہیں حاضری کے لیے مچلتے ہیں
اذن طیبہ کی آس میں آقا وہ پُر ارمان سلام کہتے ہیں
تیرے روضے کی جالیوں کے قریں ساری دنیا سے میرے سردردیں
کتنے خوش بخت روز آ آکر تیرے مہمان سلام کہتے ہیں
آ رزوۓ حرم ہے سینے میں اب تو بلوائیے مدینے میں
تجھ سے تجھ ہی کو مانگتے ہیں جو وہ مسلمان سلام کہتے ہیں
آپ عطار کیوں پریشاں ہیں عاصیوں پر بھی وہ مہرباں ہیں
وہ کرم خاص ان پر کرتے ہیں جو مسلمان سلام کہتے ہیں

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا مدینے کی
مہکی مہکی فضا مدینے کی

آرزو ہے خدا مدینے کی
مجھ کو گلیاں دکھا مدینے کی

دن ہے کیسا منوّر و روشن!
رات رونق فَزا مدینے کی

چھاؤں تو ہر جگہ کی ٹھنڈی پر
دھوپ بھی دِلرُبا مدینے کی

ہے پہاڑوں پر نور کی چادر
وادیاں دل کُشا مدینے کی

کیوں ہو مایوس اۓ مر یضو! تم
لے لو خاکِ شفا مدینے کی

کوئی ناکام لوٹتا ہی نہیں
راہ لے اۓ گدا !مدینے کی

میری قسمت میں کاتبِ تقدیر !
لکھ دے لکھ دے قضا مدینے کی

جا کے عؔطار پھر مدینے میں
رحمتیں لُوٹنا مدینے کی

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post

نور والا آیا ہے
نور لے کر آیا ہے

سارے عالم میں دیکھو کیسا نور چھایا ہے
الصلوٰۃ والسلام علیک یا رسول اللہ
الصلوٰۃ والسلام علیک یا حبیب اللہ

جب تلک یہ چاند تارے جِھلمِلاتے جائیں گے
تب تلک جشنِ ولادت ہم مناتے جائیں گے

نعتِ محبوب خدا سُنتے سناتے جائیں گے
یا رسول اللہ نعرہ ہم لگا تے جائیں گے ۔

چار جانب ہم دیے گہی کے جلاتے جائیں گے
گھر تو گھر ہم سارے محلّے کو سجاتے جائیں گے

عید میلاد النبی کی شب چراغاں کر کے ہم
قبر، نور ِ مصطفٰے سے جگمگاتے جائیں گے

تم کرو جشنِ ولادت کی خوشی میں روشنی
وہ تمہاری گورِ تیرہ جگمگاتے جائیں گے

شاعر :علامہ محمد الیاس عطار قادری

Comments are off for this post