رُخِ محبوبِ سُبحانی کے صدقے
میں اس تصویر نورانی کے صدقے

شہۂ اقلیمِ عرفانی کے صدقے
جناب غوثِ صمدانی کے صدقے

معین الدین اجمیری کے قرباں
محی الدین جیلانی کے صدقے

بنا ہے سینہ گلزارِ خلیلی
میں اپنے دردِ پہانی کے صدقے

تصدق مہہ جبینوں پر زمانہ
میں اپنے پیر لاثانی کے صدقے

فدا بیدم علی کے لاڈلوں پر
رسول اللہ کے جانی کے صدقے

شاعر :بے دم وارثی

Comments are off for this post

بے خود کیےدیتے ہیں اندازِ حجابانہ
آ دل میں تجھے رکھ لوں اۓ جلوۂ جانانہ!

بس اتنا کرم کرنا اۓ چشمِ کریمانہ
جب جان لبوں پر ہو ، تم سامنے آجانا

جب تم نے مجھے اپنا ،دنیا میں بنایا ہے
محشر میں بھی کہہ دینا یہ ہے میرا دیوانہ

جی چاہتا ہے تحفے میں بھیجوں انہیں آنکھیں
درشن کا تو درشن ہو نذرانے کا نذرانہ

پینے کو تو پی لوں گا پر شرط ذرا سی ہے
اجمیر کا ساقی ہو بغداد کا مئے خانہ

کیوں آنکھ لگائی تھی؟ کیوں آنکھ ملائی تھی؟
اب رُخ کو چھپا بیٹھے ، کر کے مجھے دیوانہ !

بیدؔم میری قسمت میں، سجدے ہیں اِسی در کے
چھوٹا ہے نہ چھوٹے گا ، سنگِ درِ جانانہ

شاعر :بے دم وارثی

Comments are off for this post