ہے یہ دل کی صدا یا نبی یا نبی
ہو عطا پر عطا یا نبی یانبی

جس گھڑی روح تن سے جدا ہو میری
ہو وظیفہ میرا یانبی یا نبی

آپ ہی بخشوائیں گے محشر کے دن
ہوں بھلا یا بُرا یا نبی یانبی

آئیں جس دم فِرِشتے میری قبر میں
ہو لبوں پہ ثنا یا نبی یا نبی

مصطفٰےﷺکا اگر چاہتے ہو کرم
مل کے کہہ دو ذرا یا نبی یا نبی

رَدّ کبھی نہ دعا ہو گی اس شخص کی
دے گا جو واسطہ یا نبی یا نبی

اس معینِ حزیں پہ کرم کیجیے
دَر گزر ہو خطا یا نبی یا نبی

شاعر :محمد معین خان قادری

Comments are off for this post

ہوگئے ہیں دور سب رنج والم
جب ہوا سرکار کا مجھ پر کرم

ہے یقیں دربار میں اپنے مجھے
ایک دن بلوائیں گے شاہِ امم

ہے جسے نسبت میرے سرکار سے
پاس اُس کے کیوں بھلا آئینگے غم

بس یہی ہے التجا محشر کے دن
آپ رکھ لینا غلاموں کا بھر م

جل اُٹھیں گے آرزؤں کے دیے
جب درِ سرکار پہ جائیں گے ہم

آرزو اب ہے یہی میری معیؔن
اُن کے روضے پہ نکل جائے یہ دم

شاعر :محمد معین خان قادری

Comments are off for this post