محبوب کبریا سے میرا سلام کہنا
سلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

تجھ پر خدا کی رحمت اے عازم
مدینہ نورِ محمدی سے روشن ہو تیرا سینہ

جب ساحل عرب پر پہنچے تیرا سفینہ
اس وقت سر جھکا کر لِلّٰہ با قرینہ
محبوب کبریا سے میرا سلام کہنا
سُلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

ساحل پہ آتے آتے موجوں کو چوم لینا
موجوں کے بعد دلکش ذرّوں کو چوم لینا

اس پاک سرزمین کی راہوں کو چوم
لینا پھولوں کو چوم لینا کانٹوں کو چوم لینا
محبوب کبریا سے میرا سلام کہنا
سُلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

راہِ طلب کی لذت جب قلب کو مزا دے
عشق نبیٔ مرسل جب روح کو جِلادے
جب سوز عاشقانہ جذبات کو جگادے
ہستی کا ذرّہ ذرّہ جب آہ کی صدا دے

والشمس کی ضیا سے میرا سلام کہنا
سُلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

دربارِ مصطفٰے کی حاصل ہو جب حضوری
پیش نظر ہو جس دم وہ بارگاہِ نوری
ہو دُور رنج وکلفت مِٹ جائے فکرِ دوری
دیدارِ مصطفٰے کی جب آرزو ہو پوری

محبوبِ کبریا سے میرا سلام کہنا
سلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

روضے کی جالیوں کے جس دم قریب جا نا
رو رو کے حالِ مُسلم سرکار کو سُنانا
بے ساختہ مچلنا جوشِ جنوں دکھانا
سینے میں بسانا آنکھوں میں بھی بسانا

پھر نورِ حق نماسے میرا سلام کہنا
سُلطان انبیاء سے میرا سلام کہنا

شاعر :مسلمؔ

Comments are off for this post

محبوب کبریا سے میرا سلام کہنا
سلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

تجھ پر خدا کی رحمت اے عازم مدینہ نورِ محمدی سے روشن ہو تیرا سینہ
جب ساحل عرب پر پہنچے تیرا سفینہ اس وقت سر جھکا کر للہ با قرینہ
محبوب کبریا سے میرا سلام کہنا
سُلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

ساحل پہ آتے آتے موجوں کو چوم لینا موجوں کے بعد دلکش ذرّوں کو چوم لینا
اس پاک سرزمین کی راہوں کو چوم لینا پھولوں کو چوم لینا کانٹوں کو چوم لینا
محبوب کبریا سے میرا سلام کہنا
سُلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

راہِ طلب کی لذت جب قلب کو مزا دے عشق نبیٔ مرسل جب روح کو جِلادے
جب سوز عاشقانہ جذبات کو جگادے ہستی کا ذرّہ ذرّہ جب آہ کی صدا دے

والشمس کی ضیا سے میرا سلام کہنا
سُلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

دربارِ مصطفٰے کی حاصل ہو جب حضوری پیش نظر ہو جس دم وہ بارگاہِ نوری
ہو دُور رنج وکلفت مِٹ جائے فکرِ دوری دیدارِ مصطفٰے کی جب آرزو ہو پوری

محبوبِ کبریا سے میرا سلام کہنا
سلطانِ انبیاء سے میرا سلام کہنا

روضے کی جالیوں کے جس دم قریب جا رو رو کے حالِ مُسلم سرکار کو سُنانا
بے ساختہ مچلنا جوشِ جنوں دکھانا سینے میں بسانا آنکھوں میں بھی بسانا

پھر نورِ حق نماسے میرا سلام کہنا
سُلطان انبیاء سے میرا سلام کہنا

شاعر :مسلمؔ

Comments are off for this post

تیری خیر ہو وے پہر ے دارا! روضے دی جالی چُم لین دے
اساں ویکھاو ایں رب دا نظارا، روضے دی جالی چُم لین دے

نہ او طور، نہ عر شِ معلّی، اوتھے ہر ویلے رب دا تجلّٰی
ایہہ محمد دا پاک دوارا ،روضے دی جالی چم لین دے

ساڈے مولٰی نے ایہہ دن دکھائے، آ کے ڈیر ے غریباں نے لائے
ایتھے رب دا حبیب پیارا، روضے دی جالی چم لین دے

اس ہر ے ہرے گنبد دی چھانویں ،اساں دیکھے رسولاں دے نانویں
تایوں جھکدا ایتھے جگ سارا ،روضے دی جالی چم لین دے

جدوں آون گیا ں اودی یاداں ، اساں رُو رُو کَر اں گے فر یاداں
جاندی واری تے سانوں خدارا ،روضے دی جالی چم لین دے

جہڑے نور دا رب شیدائی ،اودا صدقہ اے ساری خدائی
او سے نور دا ایتھے چمکارا روضے دی جالی چم لین دے

اساں مہماں ہاں گھڑی و پل دے لکھے لیکھ نہ مؔسلم ٹل دے
خبر آؤ ناں ہو وے نہ دوبارا روضے دی جالی چم لین دے

شاعر :مسلمؔ

Comments are off for this post