مینہہ برسدا ویکھیا انوار دا
ذِکر ہو وے جس جگہ سر کار دا

کون سی نی؟ دس حلیمہ ؓ کون سی ؟
بکریاں جو تیریاں سی چار دا

ویکھ لیندا جو مِرے محبوب نوں
مال تے کی جان اپنی وار دا

ہین زلفاں سوہنیاں ، من موہنیاں
نور وِچّوں دی ہے لَشکاں مار دا

ہے بڑا خوش بخت جالی نال جو
لا کے سینے تے کلیجہ ٹھا ر دا

وِچ صحابہ بیٹھدے سَن جَد حضور
کی سماں ہو سی بھلا دربار دا

لگ پتہ جائے گا ناؔصر حشر نوں
مُل پوِے گا جَد ترے اشعار دا

شاعر :ناصر چشؔتی

Comments are off for this post

حَبِیبا اچی شان والیا جے توں آئیوں تے بہاراں آئیاں
اللہ نوں توں پیارا لگنا ایں تاہیوں رب نے وی خوشیاں منائیاں

زلف تری دے کنڈل سوہنے موہ لیندے نے دل من موہنے
چن سدا لُکدا پھرے تیرے مکھ دیاں ویکھ صفائیاں

عرب شریف دیا سردارا آمنہ پاک دیا دلدارا
تیرے جیہا سوہنا سونیئے کدوں جمدیاں نت نت مائیاں

رحمت دی تساں اکھ جد کھولی پاک حلیمہ بھر لئی اے جھولی
لے گئی او خزانے رب دے خالی رِہ گئیاں دو جیاں دائیاں

جس پاسے تُساں کیتے اشارے ، ڈھل پئے اودھر مست نظارے
ظلمتاں دے بند ٹٹ گئے، تساں رحمت اِنج برسائیاں

خالق نے اِنج کر م کمایا ، جیویں کہیا تساں، اُوویں بنایا
شان تیری نہیوں مکنی کئی صدیاں مکن تے آئیاں

ناؔصر پڑھ پڑھ تیریاں نعتاں بُھل گیا سارے جگ دیاں باتاں
پیار تیرا پلے سوہنیا کی کرنیاں ہور کمائیاں

شاعر :ناصر چشؔتی

Comments are off for this post

دو جہاں کے والی کا دو جہاں پہ سایہ ہے
اُن کو تو خدا نے اُن کی مرضی سے بنایا ہے

نوری نوری تلوے کیسے پیارے جلوے ہیں
چاند اُن کے جلوؤں کی بھیک لینے آیا ہے

والضحٰی کا چہرہ ہے طٰہٰ کا سہرا ہے
اُن کے مسکرانے سے زمانہ جگمگا یا ہے

نبیوں نے سلامی دی ولیوں نے غلامی کی
سرپہ اُن کے خالق نے تاج وہ سجایا ہے

طور پر کہا ربّ نےلَنۡ تَرَانِیۡ موسیٰ کو
پر مدینے والے کو عرش پر بلایا ہے

برکتوں کے ریلے ہیں نور یوں کے میلے ہیں
حلیمہ تیری کُٹیا میں یہ کون مسکرایا ہے !

موج میں جب آتے ہیں تاج ور بناتے ہیں
سب پہ ہے کرم ناؔصر اپنا یا پرایا ہے

شاعر :ناصر چشؔتی

Comments are off for this post

میر ی بات بن گئی ہے تیری بات کرتے ہیں
تیرے شہر میں میں آؤں تیری نعت پڑھتے پڑھتے

تیرے عش کی بدولت مجھے زندگی ملی ہے
میری موت بھی آئے آقا آئےتیرا ذکرکرتے کرتے

کس چیز کی طلب ہے نہ آرزو ہے کوئی
تو نے اتنا بھر دیا ہے کشکول بھرتے بھرتے

میرے سوہنے سوہنے گھر میں کبھی نعمتیں عطا ہوں
میں دیوانا ہو گیا ہوں تیری راہ تکتے تکتے

ہے جو زندگانی باقی یہ اراد ہ کر لیا ہے
تیرے منکروں سے آقا میں مروں گا لڑتے لڑتے

ناصؔر کی حاضری ہو کبھی آستاں پہ تیرے
کہ زمانہ ہو گیا ہے مجھے مجھے آہیں بھرتے بھرتے

شاعر :ناصر چشؔتی

Comments are off for this post