دست حق،رحمت کل،خیر ِ بشر ،نورخدا

دست حق،رحمت کل،خیر ِ بشر ،نورخدا
جہل و باطل کے اندھیروں میں حقیقت کی ضیا
سیّد و سَرور و مولٰی و مددگار امم
وہ فرشتوں میں مکرّم وہ رسولوں میں اتم
سن کے جس نام کو جھک جائے عقیدت جبیں
جس کی نعلین کہ اتری نہ سر عرش بریں
جس نے دنیا ئے تمدّن کے سجائے دروبام
جس پہ تہذیب نے بھیجا ہے درود اور سلام
سرمئہ نور ِ بصر ،خاک ِ کف ِپا جس کی
ہمہ اوصاف خدا،صُورت ِ زیبا جس کی
نقطئہ نور،خطِ نور،سَر خامئہ نور
جس نے بخشا ہے اندھیروں کو اُجالے کا شعور
جس کے احساس کی خوشبو سے مہک جائیں دماغ
جس کو آواز دو ظلمت میں تو جل جائیں چراغ
ظلم کو موت کا پیغام ،محبت کو بقا
ایک امّی نے دیا اہل جہاں کو کیا کیا