میری قسمت کا چمکے ستارہ سوئے من چشم رحمت خدارا

میری قسمت کا چمکے ستارہ سوئے من چشم رحمت خدارا
میں بھی طیبہ کا کرلوں نظارا سوئے من چشم رحمت خدارا
حشر میں شہ کی امت کھڑی ہے یہ گھڑی کیسی مشکل گھڑی ہے
ایک افتاد سب پر پڑی ہے غم ہے یا آنسوؤں کی جھڑی ہے
دل ندامت سے ہیں پارہ پارہ
سوئے من چشم رحمت خدارا
مری کشتی میں تھا ،بوجھ عصیاں ڈوب جانے کا تھا سارا ساماں
آپ کے نام نامی کے قرباں اک طرف ہوگئی موج طوفاں
آپ کو میں نے جس دم پکارا
سوئے من چشم رحمت خدارا
ایسا در اور کوئی کہاں ہے بے سہاروں پہ سایہ جہاں ہے
ہر گھڑی رحمت بے کراں ہے بس یہی ایک وہ آستاں ہے
عاصیوں کا جہاں ہے گذارا
سوئے من چشم رحمت خدارا
جب سے تلوؤں کا دھوون ملاہے روئے خورشید چمکا ہواہے
کس لئے پھول مہکا ہواہے عنبر و کیسر و مشک کیا ہے
آپ کی زلف کا ہے اتارا
سوئے من چشم رحمت خدارا
ہو ادیب حزیں بھی وہاں پر رحمتیں بٹ رہی ہوں جہاں پر
لب پہ جاری ہو نعتیں وہاں پر ہو نظر سرور دو جہاں پر
دیکھتے ہی رہے یہ نظارا
سوئے من چشم رحمت خدارا