ملتا نہ کبھی انسانوں کو منزل کا نشاں

ملتا نہ کبھی انسانوں کو منزل کا نشاں
پاتے نہ ستائے لوگ کبھی ظالم سے اماں
آتے جو نہ تم ﷺ رہتا یہ جہاں ویراں ویراں
عالم ہے تمہاری خاکِ کف پا سے ذیشاں
صحرا میں بنے گلزار ،تمہارےنقش قدم اللہ کی قسم
سرکار بچالو لاج،ہمارا رکھ لو بھرم ،یاشاہ امم
دکھ درد کے مارے ہیں مجبور ہیں ہم ، یاشاہ امم
اے ساقیء کوثر شانِ کریمی دکھلائیں
لبریز محبت کا اک ساغر پلوائیں
ہے فکر ادیؔب مدینے تک کیسے جائیں
گر چشم ِ کرم ہوجائے تو راہیں کھل جائیں
سلطان ِ کرم ،اب رکھ لو مرے اشکوں کا بھرم ، اللہ کی قسم
سرکار ،بچالو لاج،ہمارارکھ لو بھرم،یاشاہ امم
دکھ درد کے مارے ہیں ،مجبور ہیں ہم،یاشاہ امم