نہ آیا ہوں نہ میں لایا گیا ہوں

نہ آیا ہوں نہ میں لایا گیا ہوں

میں حرف کن ہوں فرمایا گیا ہوں

مری اپنی نہیں ہے کوئی صورت

ہر اک صورت سے بہلایا گیا ہوں

بہت بدلے مرے انداز لیکن

جہاں کھویا وہیں پایا گیا ہوں

وجود غیر ہو کیسے گوارا

تری راہوں میں بے سایہ گیا ہوں

نہ جانے کون سی منزل ہے واصفؔ

جہاں نہلا کے بلوایا گیا ہوں