گلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام

گلِ باغِ رسالت پہ لاکھوں سلام
اس بہارِ شریعت پہ لاکھوں سلام

جس کے سائے میں عاصی چھپیں حشر میں
ایسے دامانِ رحمت پہ لاکھوں سلام

جس کی آغوشِ رحمت نے ہم کو لیا
اس کی الفت، محبت پہ لاکھوں سلام

فکرِ امت میں جس کے کٹے روز و شب
ایسے حامیٔ اُمت پہ لاکھوں سلام

جس کی صورت سے ظاہر ہو شانِ خدا
ایسی نورانی صورت پہ لاکھوں سلام

جس نے عالم دو عالم کو مہکا دیا
اس کی زلفوں کی نکہت پہ لاکھوں سلام

جس سے محمود روشن کیے دو جہاں
اس کی شمعِ ہدایت پہ لاکھوں سلام